Hesham A Syed

January 6, 2009

Our environment , attitude and character

Filed under: Muslim world,Pakistan — Hesham A Syed @ 11:39 am
Tags:

Urdu Article : Hamaaraa Mahoal , Hamaara rawaiya aur Kirdaar – Hesham Syed

بزمِ خیال

ہمارا ماحول ، ہمارا رویہ اور کردار

«        ہماری قومی زبان :  اردو ، ہندی ، فارسی ، عربی وغیرہ 

          دینی زبان :  عربی ، سنسکرت یا گور مکھی

          ادبی زبان :  اردو ، ہندی ، انگریزی اور بہت ساری

          مادری زبان :  اپنی  اپنی

          دفتری زبان :  انگریزی  فرانسیسی  عربی  ہندی  اردو  وغیرہ

کس زباں سے اے گلِ پژمردہ تجھ کو گل کہوں    کس طرح تجھ کو تمنائے دل بلبل کہوں

«        ہماری ظاہری شناخت :  ہندوستانی ، پاکستانی ، عربی ، ترکی ، ایرانی ، انگلستانی ، یورپی ، امریکی ، کنیڈین وغیرہ

٭        ہماری  باطنی شناخت :  قبیلہ پرستی ، عصبیت و نفرت انگیزی ۔ ہر دل مٔے خیال کی مستی سے چور ہے

«        ہماری جغرافیائی سرحدیں : غیر محفوظ 

٭        لیکن فلمی ، تہذیبی ، ثقافتی:  سرحدیں محفوظ

«        افسر شاہی کی اصطلاح: پبلک سرونٹس ۔ 

          لیکن بھوکی اور ننگی پبلک کے سرونٹس پبلک ہی کے رقم سے گلچھڑے اڑائیں۔ عوام کے سکھ چین کی فکر صرف ریڈیو ، ٹی وی پہ یا جلسوں اور اخباروں میں

 آپ ہی اپنی اداؤں پہ ذرا غور کریں  :  ہم اگر عرض کریں گے تو شکایت ہوگی

«        عوام کے لیے شراب حرام ، غیر ذبیحہ حرام ، آنکھوںکا ، کانوںکا اور عملی زنا حرام ۔

٭        لیکن دانشوروں ، شاعروں ، صاحب ثروت اور افسر شاہی کے لیے یہ عین حلال ۔ ع

یہ آگ کو پی جاتے ہیں پانی کرکے

«        پالیسی ساز یا حکمأ کے بچے مہنگے پرائیویٹ ا سکول میں پڑھیں ۔

٭        لیکن عوامی یا سرکاری اسکولوں کا معیار بلند کرنے پہ سالہا سال سے صرف اور صرف غور و فکر!

«        پبلک سرونٹس یا حکمراں طبقہ کے گھر کے ہر فرد کے لیے مہنگی سے مہنگی سہولتوں کی فراوانی

٭        لیکن عوام کے لیے  ۰۰۰،۰۰،۱  افراد پہ صرف ایک ۰۰۳ بیڈ کا سرکاری ہسپتال۔

«        زندگی کی بنیادی ضرورتوں کو پورا کرنے کے لئے چوری یا رشوت پر قطع ید یا سخت ترین سزاؤں کا اطلاق

٭        لیکن عوام کی دولت اور قوم کے خزانے کے لٹیروں کے گلے میں پھولوں کے ہار اور قومی ہیروجیسے بڑے القابات۔

«        پتلون اتارنے کے ماہرین کا وردی اتارنے پہ اصرار ۔پارلیمنٹ میں میزبجا کر اور شور و غوغا مچا کر قومی ، سیاسی اور دینی خدمت ع

زاغوں کے تصرف میں عقابوں کے نشیمن

«        علمادین کا حاضر و ناظر کے مسئلے پہ جھگڑا

٭        لیکن زندگی کے روز مرہ کے مسائل اور دکھی انسانیت پہ غائب الدماغی

 زباں سے دعویٰ  توحید  ہو  تو کیا حاصل  :  بنایا  ہے  بتِ  پندار کو اپنا  خدا  تو نے

«        مسئلہ امامت ، نبوت و ولایت پہ قتل وغارت گری

٭        مگر جاں بلب انسانیت سے قطعاً بے فکری   ؎

شجر ہے فرقہ آرائی  تعصب ہے  ثمر اس کا  :  یہ  وہ پھل ہے کہ جنت سے نکلواتا ہے آدم کو

عجب  واعظ  کی  دینداری  ہے  یارب  :  عداوت  ہے  اسے  سارے  جہاں  سے

«        سود کے خلاف جہادکہ موجودہ بینکاری سودی نظام ہے

٭        لیکن متبادل غیر سودی نظام ناپید اور حد سے بڑھی ہوئی منافع خوری کے بارے میں مکمل خاموشی    ؎

 ضمیر مغرب ہے تاجرانہ ضمیر مشرق ہے راہبانہ    وہاں دگرگوں ہے لحظہ لحظہ یہاں بدلتا نہیں زمانہ

«        پبلک ٹرانسپورٹ کو بہتر بنانے پہ غور خوض

 ٭       پبلک کے پیسوں سے درآمد کی ہوئی بڑی بڑی گاڑیوں میں بیٹھنے والوں کے منصوبے درمنصوبے

«        سفارشی اور نا اہلوں کا نوکریوں پہ قبضہ کر کے تعلیم یافتہ لوگوں کی بیروزگاری کے خاتمے پہ سوچ و بچار۔ ع

مقدر ان کا کھوٹا ہے میں کچھ بھی کر نہیں سکتا

«        ملک کی سرحدوں کے محافظوں کا خود اپنے ملک پہ جابرانہ قبضہ۔ ع

کہ ہم قزاق ہیں دونوں ہو وردی یا کہ شروانی

«        جمہوریت کے نام لیواؤں کا آمرانہ اور شاہانہ طرزِعمل۔ او ر بھان متی کے ٹولے کا زبردستی عوام سے چندہ  لینا اور دھمال     ؎

دما  دم  مست  مچھندر   یہ  دولت  بانٹے  بندر

«        شاعروں اور ادیبوںکے حواس پہ عورت سوار ۔اپنی شہوانیء عمری کو سوانح عمری بنا کر داد تحسین کا لوٹنا۔ قلم کو  ملحدوں کے ہاتھ بیچ کر آزادیء تقریر و تحریر کا شور مچانا۔قوم کے غم میں ڈنرکھانا اور انقلابی شاعری کرنا اور نعرے لگانا۔ایک آدھ بار ساری مراعات سے بھر پور جیل جاکر اپنے سر کٹانے کے عزم کا خوب شہرہ کرنا ۔ غرقِ مٔے ناب و سگار و تمباکو ہو کر اس کے دھوئیں میں اقوامِ غیر کی فکر کا پرچار کرنا۔ کامریڈ زندہ باد ، انکل سام زندہ باد۔

«        پبلک سر ونٹس یا حکمراں طبقہ کا بوتل ( منرل واٹر)پی کر عوام کے لئے صاف پانی مہیا کرنے کی تجویز پہ غور و خوص۔منرل واٹر کا بھی اپنا خمار ہے

«        سیاست اور حکومت میں موروثیت اور گدی نشینی

٭        ہے جس کا اندازِ  نظر اپنے زمانے سے جدا

«        سگریٹ نوشی کے مضر صحت ہونے کے اشتہارات

 ٭       لیکن سگریٹ بنانے والی فیکٹریوں کے فروغ و توسیع میںہر قسم کی مراعات اور آسانیاں

«        چاند و مریخ پہ پہنچنے کے بجائے ان پہ صرف شاعری اور افسانہ نگاری

٭                   ہم جسے دیکھ کر شعر کہتے رہے  :  وہ اسی سر زمیں پہ اترتے رہے

 اسی روز و شب میں الجھ کے نہ رہ جا  :  کہ تیرے زمان و مکاں اور بھی ہیں

«        اجتہاد کے سارے دروازے بند ۔

 پرانے اور آسیب زدہ کنویں میں مینڈکوں کے ٹر ٹرانے کی آواز

آئینِ نو سے ڈرنا  طرزِ کہن پہ اڑنا   :  منزل یہی کٹھن ہے قوموں کی زندگی میں

         

پیر صاحب کے نذرانے اور اس کے بدلے میں دم کیا ہوا پانی ، تعویذ و گنڈے ، وظیفوں کی طومار ، نتیجہ شرک و توّہم ، مزید غربت اور رسوائی ۔

  یہ ذکرِ نیم شبی ، یہ مراقبے ، یہ سرور  :  تری خودی کے نگہباں نہیں تو کچھ بھی نہیں

«        کشکول گدائی لے کر اپنی کرسی اور بادشاہت کے بچاؤ کی ترکیبیں

٭  تو جھکا جب غیر کے آگے نہ تن تیرا نہ من تیرا

«        ملک میں ساہوکاروں اور بینکاروں کی چاندی

٭        لیکن عوام کی دھوتی تنگ ۔ غربت کی چادر میں لپٹے ہوئے ننگے بدن

«        اور ۔۔ اور ۔۔۔ اور کیا کہا  جائے ؟  گنجائش اور وقت دونوں ہی مختصر..!

سکوت آموز طولِ داستاں درد ہے ورنہ  :  زباں بھی ہے ہمارے منہ میں اور تابِ سخن بھی ہے 

چمن  میں  تلخ نوائی  میری  گوارا کر  :  کہ  زہر  بھی  کبھی  کرتا  ہے  کارِ تریاقی

حشام احمد سید

 

Advertisements

Leave a Comment »

No comments yet.

RSS feed for comments on this post. TrackBack URI

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: